25 جنوری, 2021
12
اسلام آبادپاکستانخبریں

سول سروس: وزیراعظم نے نظم وضبط قواعد 2020 کی منظوری دے دی

تفصیلات کے مطابق نئے نظم وضبط قواعد 2020ء کا مقصد سول سرونٹس کی کارکردگی بہتر اور محکمانہ احتساب شفاف بنانا ہے۔ محکمانہ احتساب کے عمل کو تیز بنانے کے لیے مجاز افسر کا درجہ ختم کر دیا گیا۔ سول سرونٹس قواعد کے تحت اب صرف اتھارٹی یا انکوائری افسر کمیٹی میں ہوں گے۔

اس عمل سے نچلی سطح پر افسر مجاز کی جانب سے معمولی سزائیں دینے کا مسئلہ حل ہو گا۔

نئے قواعد کے تحت ہر مرحلے کے لیے ٹائم لائنز مقرر کر دی گئیں۔ قوانین کے ذریعے الزامات کا جواب 10سے 15 دن کے اندر دینا ہو گا، انکوائری کمیٹی یا افسر کی جانب سے کارروائی مکمل کرنے کا وقت 60 دن متعین کیا گیا ہے۔

سول سرونٹس قواعد 2020ء کے تحت اتھارٹی کی جانب سے کیس کا فیصلہ 30 دن میں کرنا ہو گا۔ انصاف کی فراہمی اور الزام پر شخصی سماعت کا موقع اتھارٹی کی جانب سے فراہم کیا جائے گا۔

پلی بارگین اور والینٹری ریٹرن کو بھی بدعنوانی کے زمرے میں شامل کیا گیا۔ نئے قوائد میں ریکارڈ کی فراہمی اور محکمانہ نمائندے کی جانب سے تاخیر کے معاملات وضع کیے گئے ہیں۔ اس کے علاوہ معطلی، ڈیپوٹیشن، رخصت اور اسکالرشپ پر افسران سے متعلق امور قوانین بھی وضع ہیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے