0
0
0
قائد حزب اختلاف نے حکومت کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ اس واقعے کو 48 گھنٹے ہوگئے ، حکومتی پالیسی کہاں ہے؟

شعیب سعید آسی

: قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف شہباز شریف نے کہا ہے کہ نریندر مودی نے پاکستان کی شہہ رگ پر ہاتھ ڈالا ہے، ہم کشمیر کو فلسطین نہیں بننے دیں اور نہ ہی اس خطے میں ایک اسرائیل بننے دیں گے۔

بھارت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر کو نیم خودمختاری دینے والے بھارتی آئین کے آرٹیکل 370 کو ختم کے حوالے سے طلب کیے گئےپارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے شہباز شریف نے کہا کہ مودی سرکار نے اقوام متحدہ اور سلامتی کونسل کے منہ پر زناٹے دار تھپڑ رسید کیا ہے، اب روایتی اور متفقہ قرار داد سے بات نہيں بنے گی ہمیں ٹھوس فیصلے کرنا ہوں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان کے پاس جھکنے کا کوئی راستہ نہیں، اب کشمیریوں کے لیے ڈٹ جانے کا وقت آگیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر کے اسپیشل اسٹیٹس کو مودی سرکار نے ختم کرکے مکمل غاصبانہ قبضہ کرلیا ہے، یہ وہ عظیم سانحہ ہے جس کا براہ راست پاکستان کی زندگی سے تعلق ہے۔

انہوں نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں بدترین سفاکی ہوئی ہے، مودی سرکار نے صرف کشمیریوں کے حقوق نہيں چھینے، پاکستان کی غیرت اور عزت کو للکارا ہے۔

قائد حزب اختلاف نے حکومت کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ اس واقعے کو 48 گھنٹے ہوگئے ، حکومتی پالیسی کہاں ہے؟

انہوں نے کہا کہ آج کہیں سے ہماری حمایت میں ایک لفظ نہيں آیا ، کیا یہ تنہائی اور  خارجہ پالیسی کی ناکامی نہيں ہے؟

انہوں نے کہا کہ "یہ کون سی ڈیل ہے کہ ہم افغانستان میں امن کا اسٹیج سجائیں اور کشمیر میں خون کی ہولی کھیلی جائے ؟ بتایا جائے یہ امریکی صدر کا ٹرمپ کارڈ تھا یا ٹریپ کارڈ تھا۔"

انہوں نے کہا کہ ہمیں تو انتظار تھا کہ وزیرا‏عظم آج قوم کو اعتماد میں لیں گے اور حقائق سامنے رکھیں گے لیکن وزيراعظم تاریخ کی بات کرتے رہے۔

شہباز شریف نے وزیراعظم کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ "ہم اس تنازع میں فریق ہیں نہ پيچھے ہٹیں گے نہ کسی کو ہٹنے دیں گے۔"

ان کا کہنا تھا کہ کشمیریوں کے ساتھ کھڑے ہوں گے اور آخری دم تک جائيں گے۔

آپ کا ردعمل؟

پوسٹ کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔


فیس بک کمنٹس