0
0
0
آئی ایم ایف کا وفد پاکستان پہنچ گیا، جو ایک ہفتے پاکستان میں قیام کرے گا، وفد سے ملکی معاشی صورت حال اور مالی معاملات پر بات چیت کی جائے گی۔

تفصیلات کے مطابق انٹرنیشل مانیٹری فنڈ کا وفد ہیرالڈ فنگر کی سربراہی میں پاکستان پہنچ گیا ، وفد سے پاکستان کی مالیاتی ضرویات اور معاشی مسائل پر بات ہوگی، اس کے علاوہ قرضوں کی ادائیگی اور معاشی اصلاحات بھی زیر بحث آئیں گی۔
آئی ایم ایف کا وفد وزارت خزانہ اوراقتصادی امور کے حکام اور گورنر اسٹیٹ بینک سے بھی ملاقات کرے گا جبکہ وفد کی وزیر خزانہ اسد عمر سے بھی ملاقات متوقع ہے۔
وزارت خزانہ ذرائع کے مطابق وفد کی آمد کا مقصد تمام آپشنز کو کھلے رکھنا ہے، حکومت نے ابھی تک آئی ایم ایف پروگرام لینے کا فیصلہ نہیں کیا ہے ۔
آئی ایم ایف کا کہنا ہےکہ پاکستان کا دورہ معمول کا ہے، ابھی تک باضابطہ طور پر پروگرام کے حصول کیلئے بات نہیں ہوئی ہے۔
اعداد و شمار کے مطابق پاکستان کو مجموعی طور پر 31 ارب ڈالر کی فنانسنگ کی ضرورت ہے، رواں مالی سال جاری کھاتوں کا خسارہ ساڑھے 18 ارب ڈالر تک ہوجانے کا خدشہ ہے۔
تاہم وزیر خزانہ اسد عمر کا کہنا ہے کہ پاکستان کو کوئی معاشی ایمرجنسی نہیں ہے۔

آپ کا ردعمل؟

پوسٹ کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔


فیس بک کمنٹس