0
0
0
سماجی رابطے کی ویب سایٹ فیس بک نے روہنگیا مسلمانوں کے قتل عام اور خواتین کے جنسی استحصال میں ملوث برمی فوج کے آرمی چیف سمیت اعلٰی فوجی افسران اور سیاسی رہنماؤں کے فیس بک اکاؤنٹ بند کر دیئے۔

تفصیلات کے مطابق روہنگیا مسلمانوں پر ڈھائے جانے والے مظالم پر اقوام متحدہ کے ادارے 'فیکٹ فائنڈنگ مشن برائے میانمار' کی مرتب کردہ رپورٹ میں برما کے آرمی چیف پر مقدمہ چلانے کی سفارش کی گئی ہے جس کے بعد سماجی رابطے کی ویب سایٹ فیس بک نے آرمی چیف کا آفیشل اکاؤنٹ بند کر دیا ہے۔
غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ اقوام متحدہ کی رپورٹ برما کے آرمی چیف سمیت 6 اعلٰی فوجی افسران اور سیاسی رہنماؤں کو روہنگیا مسلمانوں کے قتل عام اور خواتین کے جنسی استحصال میں ملوث قرار دیا گیا ہے۔
برطانوی نشریاتی ادارے کا کہنا ہے کہ فیس بک انتظامیہ نے آرمی چیف سمیت اعلٰی فوجی افسران اور میانمار کے سیاسی رہنماؤں کے 18 آفیشل اکاؤنٹ اور 52 فیس بک پیجز کو بند کیا گیا ہے جبکہ سماجی رابطے کی ویب سایٹ انسٹاگرام پر بھی ایک اکاؤنٹ ختم کیا ہے۔
برطانوی میڈیا کا کہنا ہے کہ فیس بک انتظامیہ کی جانب سے پہلی مرتبہ کسی ملک کے اعلٰی سیاسی اور عسکری قیادت کے فیس بک اکاؤنٹ ڈیلیٹ کیے گئے ہیں جبکہ جن شخصیات کے اکاؤنٹ بند کیے گئے ہیں وہ دوبارہ فیس بُک پر اپنا اکاؤنٹ نہیں بناسکتے۔
غیر ملکی خبر رساں اداروں کا کہنا ہے کہ فیس بک انتظامیہ کی جانب سے مذکورہ اقدامات برمی فوج کے جنگی جرائم سے اظہار نفرت اور غلط مواد کے فروغ کو روکنے کی پالیسی کے تحت اٹھائے گئے ہیں۔

آپ کا ردعمل؟

پوسٹ کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔


فیس بک کمنٹس