1 مارچ, 2021
db81d8b1 15 d8b1d988d8b2 d9bed8b1 d8a7db8cdaa9 d8b2d8a8d8a7d986 daa9d8a7 d8aed8a7d8aad985db81d88c db81d8b2d8a7d8b1d988daba d8b2d8a8d8a7
خبریںفن و ثقافت

ہر 15 روز پر ایک زبان کا خاتمہ، ہزاروں زبانوں‌ کی معدومی کا خطرہ

اقوام متحدہ کے ادارے برائے تعلیم و ثقافت یونیسکو کے عہدیدار نے انکشاف کیا ہے کہ ہر 15 روز میں ایک زبان ختم ہو رہی ہے، ڈھائی ہزار زبانوں کی بقا کو خطرات لاحق ہیں، اندیشہ ہے کہ یہ زبانیں صفحہ ہستی سے مٹ جائیں گی۔

مادری زبان کے عالمی دن کے موقع پر غیرملکی خبررساں ادارے سے گفتگو کرتے ہوئے یونیسکو کے قومی کمیشن برائے ترکی کی انتظامی کمیٹی کے سربراہ پروفیسر ڈاکٹر اوجال اعوز حان کا کہنا تھا کہ 21 فروری کا دن ہر سال عالمی یومِ مادری زبان کے طور پر منایا جاتا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ اس وقت دنیا بھر میں 7 ہزار کے قریب زبانیں بولی جا رہی ہیں جن میں سے ڈھائی ہزار کے ختم ہونے کے خطرات ہیں۔

انہوں نے کہا ہے کہ دنیا کے مختلف حصوں میں بولی جانے والی ڈھائی ہزار زبانوں کے بولنے والوں کی تعداد ہر گزرتے دن کے ساتھ کم ہو رہی ہے جس کی وجہ سے اُن زبانوں کو خطرات ہیں۔

پروفیسر ڈاکٹر اوجال اعوز کا کہنا تھا کہ ’ہر 15 روز میں ایک زبان ختم ہو رہی ہے، گزشتہ 10 برسوں کے دوران زبانوں کا خاتمہ بہت تیزی کے ساتھ ہوا جس کی بڑی وجہ دنیا میں سماجی، سیاسی اور اقتصادیاں تبدیلیاں ہیں‘۔

انہوں  نے کہا ہے کہ تقریباً 200 کے لگ بھگ زبانیں ایسی ہیں جنہیں بولنے والوں کی تلاش مشکل ہو رہی ہے۔ 1950ء سے اب تک 250 زبانیں صفحہ ہستی سے مٹ چکی ہیں جبکہ مزید کی معدومی کا خطرہ ہے۔

پروفیسر اوجال کا کہنا تھا کہ ’اس وقت بولی جانے والی 2 ہزار 304 زبانوں کو استعمال کرنے والے 90 فیصد سے زائد انسانوں کی تعداد 10 ہزار یا پھر اُس سے بھی کم رہ گئی ہے، جس کی وجہ سے ان زبانوں کی آئندہ نسلوں تک منتقلی ہونا بہت مشکل ہے‘۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے