0
0
0
شاعر: مرزا غالبؔ

دل ناداں تجھے ہوا کیا ہے 
آخر اس درد کی دوا کیا ہے 

ہم ہیں مشتاق اور وہ بیزار 
یا الٰہی یہ ماجرا کیا ہے 

میں بھی منہ میں زبان رکھتا ہوں 
کاش پوچھو کہ مدعا کیا ہے 

جب کہ تجھ بن نہیں کوئی موجود 
پھر یہ ہنگامہ اے خدا کیا ہے 

یہ پری چہرہ لوگ کیسے ہیں 
غمزہ و عشوہ و ادا کیا ہے 

شکن زلف عنبریں کیوں ہے 
نگہ چشم سرمہ سا کیا ہے 

سبزہ و گل کہاں سے آئے ہیں 
ابر کیا چیز ہے ہوا کیا ہے 

ہم کو ان سے وفا کی ہے امید 
جو نہیں جانتے وفا کیا ہے 

ہاں بھلا کر ترا بھلا ہوگا 
اور درویش کی صدا کیا ہے 

جان تم پر نثار کرتا ہوں 
میں نہیں جانتا دعا کیا ہے 

میں نے مانا کہ کچھ نہیں غالبؔ 
مفت ہاتھ آئے تو برا کیا ہے 

آپ کا ردعمل؟

پوسٹ کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔


فیس بک کمنٹس